اسلام آباد میں پھانسی پر لٹکا ہوا شخص ‘ذہنی مریض’ پایا گیا: پولیس

جاں بحق ہونے والے شخص کی شناخت 30 سالہ عمر شاہام کے نام سے ہوئی ہے جس کا تعلق مردان، خیبرپختونخوا سے تھا۔

پولیس کا پیلا ٹیپ جرائم کے مقام پر آویزاں ہے۔ – رائٹرز/فائل

اسلام آباد: وفاقی دارالحکومت کی پولیس نے پیر کو کہا ہے کہ جس شخص کی لاش وفاقی دارالحکومت میں ایک پل سے لٹکی ہوئی ملی تھی وہ “میٹالی بیمار” تھا۔

اسلام آباد پولیس کا بیان اسلام آباد کے فیصل ایونیو کے علاقے میں ایک پل سے لٹکی ہوئی لاش ملنے کے بعد سامنے آیا ہے۔

ابتدائی اطلاعات کے مطابق گھنی دھند کے باعث لاش کئی گھنٹوں سے بے دھیانی میں لٹکی ہوئی تھی۔

لاش سے ملنے والے دستاویزات سے متوفی کی شناخت 30 سالہ عمر شاہام ولد عمر بہادر کے نام سے ہوئی ہے۔

افسر نے بتایا کہ متاثرہ شخص اسلام آباد کا رہائشی ہے جس کا تعلق مردان، خیبر پختونخواہ (کے پی) سے ہے۔

- تفتیشی افسران کی ابتدائی رپورٹ
– تفتیشی افسر کی ابتدائی رپورٹ

دریں اثنا، پولیس کا کہنا ہے کہ واقعے کے بارے میں اہل خانہ کی مدد سے مزید تفتیش کی جارہی ہے جو کہ ابتدائی طور پر خودکشی لگتی ہے۔

آبپارہ پولیس اسٹیشن کے دائرہ اختیار میں ایک پل سے لٹکی ہوئی لاش، جو خودکشی معلوم ہوتی ہے، برآمد ہوئی ہے۔ […] اور متوفی کو پمز ہسپتال منتقل کر دیا گیا ہے،” تفتیشی افسر (IO) کی رپورٹ پڑھیں۔

اس بات پر زور دیتے ہوئے کہ اگر ذہنی صحت پر مناسب توجہ دی جائے تو ایسی اموات کو روکا جا سکتا ہے، اسلام آباد پولیس نے عوام پر زور دیا ہے کہ وہ ذہنی صحت کے مسائل میں مبتلا افراد پر نظر رکھیں اور ’15’ ہیلپ لائن پر غیر معمولی سرگرمیوں کی اطلاع دیں۔

اس سے پہلے دن میں، کراچی پولیس نے کراچی کے وائرلیس گیٹ کے قریب واقع ایک کثیر المنزلہ عمارت کے اپارٹمنٹ سے ایک ہی خاندان کی پانچ لاشیں برآمد کیں۔

حکام کے مطابق مقتول کی شناخت سید احسن رضا رضوی کے نام سے ہوئی ہے، جس نے اپنے اپارٹمنٹ میں بیوی اور تین بچوں کو قتل کرنے کے بعد رسی سے لٹک کر خودکشی کر لی۔

پولیس کو ایک لیپ ٹاپ پر محفوظ فائل کی طرف لے جانے والا ایک نوٹ بھی ملا جس سے معلوم ہوا کہ متوفی نے اپنے الفاظ میں، مالی پریشانیوں کی وجہ سے “آسان آپشن” کا انتخاب کیا۔

Check Also

گوادر میں بارش نے تباہی مچا دی، پورا ساحلی شہر زیر آب آ گیا۔

گوادر میں شہری سیلاب کے باعث نظام زندگی درہم برہم، گلیاں، دکانیں مکمل طور پر …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *